سوال: السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ، اللہ پاک سے امید ہے کہ آپ سب خیریت سے ہوں گے، محترم مفتیان صاحبان سے ایک مسئلہ کے بارے میں معلوم کرنا تھا، مسئلہ یہ ہے کہ جو لوگ داڑھی میں ڈیزائن بناتے ہیں کیا وہ اس عمل سے دائرہ اسلام سے خارج ہوجاتے ہیں اور کیا اس عمل سے ان کا نکاح ٹوٹ جاتا ہے؟ جزاک اللہ

جواب: واضح رہے کہ داڑھی تمام انبیائے کرام علیھم السلام کی سنت، اور مرد کی فطرت میں سے ہے، اسی لیے جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی امت کو داڑھی رکھنے کی ہدایات دی ہیں، اسی وجہ سے جمہور علمائے امت کے نزدیک داڑھی رکھنا واجب اور اس کو کترواکر یا منڈوا کر ایک مشت سےکم کرنا ناجائز ہے اور گناہ کبیرہ ہے، اور اس کا مرتکب فاسق اور گناہ گار ہے۔

اسی طرح داڑھی میں ڈیزائن بنانا بھی ناجائز اور گناہ کبیرہ ہے، بلکہ اس کی قباحت اور زیادہ ہے، کیونکہ اس میں ایک طرح سے سنت کی حقارت بھی پائی جاتی ہے، لیکن داڑھی میں محض ڈیزائن بنانے سے کفر لازم نہیں آتا، البتہ اگر کوئی شخص سنت کو قبیح سمجھ کر اور سنت کے استخفاف (سنت کو حقیر سمجھنے) کی نیت سے داڑھی میں ڈیزائن بنائے تو ایسا کرنا کفر ہے

شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں