دل کی دھڑکن کی بے قاعدگی

اے ایف کے مرض سے دو چارافراد کے دل کے بالائی چیمبرز یعنی ایٹریا اچانک سکڑجاتے ہیں اور بعض اوقات اتنا جلدی کہ دل کے عضلوں کو دو بار سکڑنے کے درمیان ٹھیک سے پرسکون ہونے کا موقع نہیں ملتا۔ ایسے افراد جو اس مرض سے دوچار ہیں اور ادویات کے ذریعے اس پر قابو پاتے ہیں انہیں اپنی غذائی عادات پر بھی نظرثانی کی ضرورت ہے۔

کچھ ایسی غذائیں ہیں جن سے پرہیز اس بیماری کے خطرات کو کم کرسکتا ہے اور ادویات لینے والوں کو خصوصا ان غذاؤں کو کھانے سے پہلے سوچنا چاہیئے۔

کافی

کافی کے فوائد اپنی جگہ لیکن اسے بہت زیادہ مقدار میں پینے کا مطلب ہے کیفین کی زیادہ مقدار لینا جو آپ کے بلڈ پریشر میں اضافہ کرتی ہے اور اس مرض کے خدشات بڑھ جاتے ہیں۔ ایک دن میں دو یا زیادہ سے زیادہ تین کپ کافی سے زائد نہ پئیں۔

گریپ فروٹ

اگر آپ اپنے دل کی دھڑکن کی بےقاعدگی کیلئے دواق کا استعمال کرتے ہیں تو پھر آپ کو ترش پھلوں کا استعمال ترک کردینا چاہیئے کیونکہ گریپ فروٹ اور اس کے جوس میں کچھ ایسے کیمکلز پائے جاتے ہیں جوامن ادویات کے مضراثرات کے خدشات کو بڑھا دیتے ہیں۔ اسلیے گریپ فروٹ کا استعمال اپنے ڈاکٹرکے مشورے سے ہی کریں۔

سرخ گوش

گائے، بھینس،بھیڑوغیرہ کے گوشت میں پائی جانے والی سیچوریٹڈ چکنائی نقصان دہ کولیسٹرول میں اضافہ کرتی ہے اورہائی ایل ڈی ایل کولیسٹرول بھی اس بیماری کا بڑا سبب ہے۔

ٹرکی کا گوشت

ٹرکی کے گوشت کا ایک سلائس اپنے اندرای ہزار ملی گرام سوڈیم رکھتا ہے جو روزمرہ مقدار کی ضرورت کی آدھی مقدار ہے۔ اسے نظر انداز کیجئے کیونکہ بہت زیادہ نمک بلڈ پریشر میں اضافے کا باعث بن کر دل کی بےترتیب دھڑکن کا بڑا سبب بن سکتا ہے۔اس کے علاوہ پزا، ڈبہ بند سوپ، ڈبل روٹی اور رول وغیرہ میں بھی نمک کی بہت زیادہ مقدار پائی جاتی ہے۔

ڈبہ بند جو کا دلیہ یا سیریل

ایسے دلیے میں چینی کی مقدار پائی جاتی ہے ، عموما ایک بالغ فرد دن میں 22 چمچ دلیے کے کھا جاتا ہے لیکن ایسا نہیں ہونا چاہیئے۔ خواتین کیلئے 6 چمچ جبکہ مرد حضرات کیلئے 9 چمچ کافی ہے۔ اضافی شکر موٹاپے اور بلڈ پریشر کی طرف لیکر جاتی ہے اس کے علاوہ پاستا ساس، گرینولا اور کیچپ وغیرہ میں بھی شکر کی بڑی مقدار پائی جاتی ہے۔

مکھن

دودھ، کریم یا پنیرسے بنی مصنوعات بھی سیچوریٹڈ فیٹ کا بڑا ذریعہ ہیں جو نقصان دہ کولیسٹرول کو مزید بڑھاتے ہیں اس لیے کوشش کریں کہ کم چکنائی والا یا اسکمڈ دودھ اور چکنائی سے پاک ڈیری مصنوعات استعمال کریں۔

تلی ہوئی اشیا

ڈاکٹرز کے نزدیک ڈونٹس، چپس، فرنچ فرائز وغیرہ سب سے برا ذریعہ ہیں جو جسم میں اچھے کولیسٹرول کی مقدار گھٹاتے ہوئے ایل ڈی ایل کولیسٹرول بڑھا دیتی ہیں۔ اس کے علاوہ بیکری مصنوعات یعنی کیک، بسکٹ وغیرہ کے ساتھ بھی یہی معاملہ ہے۔

انرجی ڈرنکس

ایک تحقیق کے مطابق دل کی دھڑکن میں بےقاعدگی کا بڑا سسب انرجی ڈرنکس بھی ہیں جن میں کیفین کی بہت زیادہ مقدار شامل ہوتی ہے۔ فوری طاقت کے لیے دیرپا نقصان سے بچیے اور ان کا استعمال ترک کردیں۔

سفید چاول

دل کو صحت مند رہنے کیلئے فائبر کی بھی ضرورت ہوتی ہے جو کہ کولیسٹرول کی مقدار کنٹرول کرنے میں معاون ثابت ہوتا ہے۔ فائبر دل کی بیماریوں کے علاوہ موٹاپے اور ٹائپ 2 ذیابیطس سے بھی بچاتا ہے۔ لیکن ضروری ہے کہ اس کے حصول کیلئے سفید چاولوں سے گریز کر کے براؤن رائس استعمال کیے جائیں کیونکہ ان میں فائبر کی زیادہ مقدار پائی جاتی ہے جو بیماری کا خطرہ گھٹاتی ہے۔

ہرچیز کی زیادتی بھی نقصان دہ ہے

بہت زیادہ کھانا چاہے وہ صحت مند غذا ہی کیوں نہ ہو،موٹاپے کی وجہ بنتاہےاور موٹاپا اس بیماری کا خطرہ کئی گنا بڑھا دیتا ہے۔ اپنی خوراک کو کئی حصوں میں تقسیم کر کے کھائیں بجائے اس کے کہ آپ ایک ہی وقت میں بہت سارا کھا جائیں۔

شیئر کریں